اکثریت کے خلاف فیصلہ

جمہوریت کا پیمانہ اورمعبود اور تمام قوانین کا سرچشمہ اکثریت ہوتی ہے جبکہ شوریٰ میں اکثریت کوئی پیمانہ نہیں بلکہ اللہ نے اپنی کتاب میں واضح طور پر اکثریت کے خلاف فیصلہ دیا ہے ۔فرمایا:

وَ اِنْ تُطِعْ اَکْثَرَ مَنْ فِی الْاَرْضِ یُضِلُّوْکَ عَنْ سَبِیْلِ اﷲِ اِنْ یَّتَّبِعُوْنَ اِلَّا الظَّنَّ وَ اِنْ ہُمْ اِلَّا یَخْرُصُوْنَ۔(انعام:116)

اور اگر آپ نے زمین پر رہنے والے افراد کی اطاعت کی تو وہ آپ کو اللہ کی راہ سے بہکادیں گے وہ محض گمان پر چلتے ہیں اور صرف اندازے لگاتے ہیں ۔

وَ مَآ اَکْثَرُ النَّاسِ وَ لَوْ حَرَصْتَ بِمُؤْمِنِیْنَ۔(یوسف:103)

اور اکثر لوگ ایمان لانے والے نہیں اگرچہ آپ اس کی تمنا کرتے رہیں۔

وَ اِنَّ کَثِیْرًا مِّنَ النَّاسِ بِلِقَآءِ رَبِّہِمْ لَکٰفِرُوْنَ۔(روم:9)

اور اکثر لوگ اپنے رب سے ملاقات کا انکار کرتے ہیں ۔

وَ مَا یُؤْمِنُ اَکْثَرُہُمْ بِاﷲِ اِلَّا وَ ہُمْ مُّشْرِکُوْنَ۔(یوسف:106)

اورنہیں ایمان لائے ان میں سے اکثر اللہ پر مگر اس حال میں کہ وہ مشرک ہوتے۔

وَلَکِنَّ اَکْثَرَ النَّاسِ لَا یَشْکُرُوْنَ۔(بقرہ:243)

لیکن لوگوں کی اکثر یت شکر نہیں کرتی۔

وَلَکِنَّ اَکْثَرَ النَّاسِ لاَ یَعْلَمُوْنَ۔(یوسف:21)

لیکن اکثر لوگ علم نہیں رکھتے ۔

فَاَبٰٓی اَکْثَرُ النَّاسِ اِلَّا کُفُوْرًا۔(اسراء:89)

پس اکثر لوگوں نے انکار کردیا لیکن ناشکری سے(نہیں کیا)۔

اس معنی کی اور بہت سی آیات ہیں نیز نبی علیہ السلام نے فرمایا:

درحقیقت لوگ ایسے سو اونٹوں کی طرح ہیں جن میں ایک بھی تو سواری کے قابل نہ پائے گا۔(عن ابن عمر متفق علیہ)

والحمد للّٰہ اوّلًا وآخراً

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s